I was just exploring around Internet and I find many websites and articles where people are doing a great mistake and disrespect in their ignorance!! They use the Abbreviation of Durood Sharif i.e. SAW, PBUH, RA, AS (ma’azALLAH) instead of writing the Durood o Salam completely… Abbreviating the Salutation with Suad ص, Sal’am صلعم and etc. is strictly forbidden. In this century, leaving aside the ordinary person, even the so-called “learned” and “intellectuals” are guilty of such. Some write, while others, and some only. Some people, in place of write or just to save a drop of Ink, fraction of paper or a second of time, people are depriving themselves in reaping great excellence and reward. They have instead chosen misfortune.

Imam al-Nawawi, the great Muhaddith and Shafi’i Faqih (Allah have mercy on him) states in his introduction to the commentary of Sahih Muslim:

“It is praiseworthy (mustahab) for a person writing Hadith that…..at the mentioning of the Messenger of Allah (Allah bless him & give him peace), he writes “Sallallahu Alayhi Wasallam” in full and not merely using abbreviations, and neither sufficing on one of the two, i.e. Salat & Salam.” [Sharh Sahih Muslim, 1/39]

Thus, when one writes the name of the Messenger of Allah (Allah bless him & give him peace), one should avoid using abbreviations such as SAW, PBUH or something similar. It is inappropriate and disrespectful to do so. The love for the Messenger of Allah (Allah bless him & give him peace) requires that one never tires, both verbally or in writing, from sending blessings and salutations upon him (Allah bless & and grant him eternal peace).

Qadhi Iyadh al-Maliki (Allah have mercy on him) mentions a Hadith wherein the Messenger of Allah (Allah bless him & give him peace) said:

“Whosoever sends blessings upon me in a book, the angels seek forgiveness for him until my name remains in that book.” [Narrated by al-Tabrani in his al-Awsat, See:al-Shifa’ by Qadhi Iyadh, P: 557]

Hence, although the requirement would be fulfilled if one verbally sent blessings and salutations upon the Messenger of Allah (Allah bless him & grant him peace), but when one writes the name of the beloved of Allah, one should also send blessings upon him in writing. I think its important to aware people with the Laws of Shari’ah regarding writing Short forms of Durood Shareef i.e.S.A.W … Suad a … Sal’am and etc.

Hence, to write S.A.W after the name of the Beloved Prophet Syyeduna Rasoolullah (Sallallahu Alaihi Wa Sallam) or A.S in place of Alaihis Salaam is really a sign of being deprived, because Sallallahu Alaihi Wa Sallam or Alaihis Salaam etc. is Durood and we decide to make abbreviations for Durood.

Hadrat Imam Jalaaludin Suyooti (Radi Allahu Ta’ala Anhu) said,

“The person who first introduced the practice of using abbreviation for Durood had his hands cut off”

Allamah Sayyad Tahtawi (radi Allahu anhu), making a marginal note in “Durr-e-Mukhtar” states, and this quotation is also found in “Fatawa Tatar Khaniah”,

“A person who writes such abbreviation with the name of any Prophet, become a Kafir.”

Note: It means belittling and this deals with the integrity of the Prophets and to belittle the integrity of Prophets in indeed Kufr. It is beyond doubt that to have the intention of belittling the status of the Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam is definitely Kufr and the above ruling pertains to such a condition or intention. The above ruling does not apply to those who, out of sheer laziness and ignorance, use such abbreviations. But, indeed, such persons are misfortunate, ill-fated and unlucky.

At this point, the great Imam and Wali, A’la Hazrat Imam Ahmed Rida al-Qadiri (radi Allahu anhu) comments by saying:

Obviously, the pen is also a language and to write any meaningless words in place of is like hearing the sacred name of the glorious Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam and mumbling some meaningless thing. Allah, the Almighty and Powerful, states :

“What was already commanded, the oppressors had changed it to something else. So We sent on them punishment from the sky in retaliation to their transgression.” [Para 1, Ruku 2]

There Allah has ordered Bani Israel to say (Say our sins be decreased), they said (We got wheat). This word has a meaning and is still a Blessing of Allah (Wheat), but just because of changing the words, it caused the displeasure of Allah and His destruction by His Punishment.

Here the order is: “O you who Believe! Salute your Nabi SallAllahu Alaihi wa Sallam and send Durood and Salutations onto him.”

And this order is compulsory every time that you hear, say or write the sacred name of the Holy Prophet SallAllahu Alaihi wa Sallam. The fulfilment of the above command when writing the sacred name is to write , but, instead, this was changed to which has absolutely no meaning. Do you not fear the Azab of Allah descending upon you? May Allah save us from this Azab! Aameen!

This concerns the Durood Sharif or Salawat whose excellence is so great that its abbreviation has a reason of Kufr in it.

Now lets deal with the Sahabas and Awliya Allah (radi Allahu anhum). After writing their names, instead of writing the meaningless letters are written. This is condemned by the Learned Ulema as Makrooh and a reason of misfortune. Sayyid Allamah Tahtawi (radi Allahu anhu) states:

“It is Makrooh to abbreviate when writing . Write it in full.”

Imam Nowawi (radi Allahu anhu), in his commentary of “Muslim Sharif” states:

“One who indulges in this act is stripped from a very great benefit (Khair) and has lost a great reward.”

Likewise, when writing and is writing. This too is nonsensical and unfortunate. We should abstain from such acts. May Allah guide us all to success. Aameen!

Following are few extracts in Urdu from Fatawa Razaviyya regarding the above discussed matter:

حضور پرنورسید عالم صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم کے ذکر کریم کے ساتھ جس طرح زبان سے درود شریف پڑھنے کا حکم ہےاللھم صل وسلم وبارک علیہ وعلٰی اٰلہ وصحبہ ابدا (اے اللہ !آپ پر اورآپ کی آل اورآپ کے صحابہ پر ہمیشہ ہمیشہ درودوسلام اوربرکت نازل فرما۔ت) درودشریف کی جگہ فقط صاد یا عم یا صلع یا صللم کہنا ہرگز کافی نہں بلکہ وہ الفاظ بے معنٰی ہیں

الجواب : حرف(ص) لکھنا جائز نہیں نہ لوگوں کے نام پر نہ حضور صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم کے اسم کریم پر، لوگوں کے نام پر تو یوں نہیں کہ وہ اشارہ ودرود کا ہے اور غیر انبیاء وملائکہ علیہم الصلٰوۃ والسلام پر بالاستقلال درود جائز نہیں اور نام اقدس پر یوں نہیں کہ وہاں پورے درود شریف کا حکم ہے صلی اللہ تعالٰی علیہ وسلم لکھے فقط ص یا صلم یا صلعم جو لوگ لکھتے ہیں سخت شنیع وممنوع ہے یہاں تک کہ تاتارخانیہ میں اس کو تخفیف شان اقدس ٹھہرایا والعیاذ باللہ تعالٰی

[Fatawa Razawiya, Vol 30, Page 663]

مسئلہ نمبر۸۴: ازشہر چاٹگام موضع چرباکلیہ مکان روشن علی مستری مرسلہ منشی محمد اسمٰعیل ۱۳شوال۱۳۳۰ھ

کیافرماتے ہیں علمائے دین کہ آنحضرت صلی اﷲتعالٰی علیہ وسلم کے جنازہ کی نماز کَے مرتبہ پڑھی گئی۔اور اول کس شخص نے پڑھائی تھی؟بینواتوجروا

الجواب

صلی اﷲ تعالٰی علٰی حبیبہ واٰلہ وبارک وسلم۔سائل کو جوابِ مسئلہ سے زیادہ نافع یہ بات ہے کہ درود شریف کی جگہ جو عوام و جہال صلعم یا ع یام یا ص یا صللم لکھا کرتے ہیں،محض مہمل و جہالت ہے،القلم احدی اللسانین(قلم دو۲ زبانوں میں سے ایک ہے۔ت) جیسے زبان سے درود شریف کے عوض یہ مہمل کلمات کہنا درود کو ادا نہ کرے گا یوں ہی ان مہملات کا لکھنا،درود لکھنے کاکام نہ دے گا، ایسی کوتاہ قلمی سخت محرومی ہے۔ میں خوف کرتاہوں کہ کہیں ایسے لوگفبدل الذین ظلموا قولاغیرالذی قیل لہم (تو ظالموں نے بدل ڈالی وُہ بات جو ان سے کہی گئی تھی ۔ت)میں نہ داخل ہوں ۔نام پاک کے ساتھ ہمیشہ پورا درود لکھا جائے صلی اﷲتعالٰی علیہ وسلم ۔

[Fatawa Razaviyyah, Vol 9, Page 314]

مسئلہ نمبر ۴۴۴: از رام نگرضلع نینی تال عنایت اﷲ خان ڈپٹی پوسٹ ماسٹر ۲۶ ذیقعد ۱۳۱۲ھ
قبلہ و کعبہ دارین ودام ظلکم! کلمہ طیبہ شریف جب ورد کرکے پڑھا جائے تو اس میں کلمہ پر جب نام نامی حضور اقدس (صلعم) صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم کا آوے درود پڑھنا چاہئے یا ایک مرتبہ جبکہ جلسہ ختم کرے؟ بینوا توجروا۔

الجواب
جوابِ مسئلہ سے پہلے ایک بہت ضروری مسئلہ معلوم کیجئے سوال میں نامِ پاک حضور اقدس صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم کے ساتھ بجائے صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم (صلعم) لکھا ہے ۔یہ جہالت آج کل بہت جلد بازوں میں رائج ہے۔ کوئی صلعم لکھتا ہے کوئی عم کوئی ص، اور یہ سب بیہودہ و مکروہ و سخت ناپسند وموجب محرومی شدید ہے اس سے بہت سخت احتراز چاہیئے اگر تحریر میں ہزار جگہ نامِ پاک حضور اقدس صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم آئے ہر جگہ پورا صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم لکھا جائے ہرگز ہر گز کہیں صلعم وغیرہ نہ ہو علماء نے اس سے سخت ممانعت فرمائی ہے یہاں تک کہ بعض کتابوں میں تو بہت اشد حکم لکھ دیا ہے۔علامہ طحطاوی حاشیہ دُرمختار میں فرماتے ہیں:

ویکرہ الرمز بالصلٰوۃ والترضی بالکتابۃ بل یکتب ذلک کلہ بکمالہ وفی بعض المواضع من التتار خانیۃ من کتب علیہ السلام بالھمزۃ والمیم یکفر لانہ تخفیف و تخفیف الانبیاء کفربلاشک ولعلہ ان صح النقل فھو مقید بقصد والافالظاھر انہ لیس بکفر وکون لازم الکفر کفرابعد تسلیم کونہ مذھباً مختارا محلہ اذاکان اللزوم بَیّناً نعم الاحتیاط فی الاحتزار عن الایھام و الشبھۃ۔ (حاشیہ الطحطاوی علی الدرالمختار مقدمۃ الکتاب مطبوعہ دارالمعرفۃ بیروت ۱/ ۶)

صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم کی جگہ (ص ) وغیرہ اور رضی اﷲ تعالٰی عنہ کی جگہ (رض) لکھنا مکروہ ہے بلکہ اسے کامل طور پر لکھا پڑھا جائے تاتار خانیہ میں بعض جگہ پر ہے جس نے درود و سلام ہمزہ (ء) اور میم (م) کے ساتھ لکھا اس نے کفر کیا کیونکہ یہ عمل تخفیف ہے اور انبیاء علیہم السلام کی بارگاہ میں یہ عمل بلا شبہ کفر ہے۔ اگر یہ قول صحت کے ساتھ منقول ہو تو یہ مقید ہوگا اس بات کے ساتھ کہ ایسا کرنے والا قصداً ایسا کرے ، ورنہ ظاہر یہ ہے کہ وہ کافر نہیں باقی لزومِ کفر سے کفر اس وقت ثابت ہوگا جب اسے مذہب مختار تسلیم کیاجائے اور اس کا محل وُہ ہوتا ہے جہاں لزوم بیان شدہ اور ظاہر ہو البتہ احتیاط اس میں ہے کہ ایہام اور شبہ سے احتزار کیا جائے۔(ت)

اب جوابِ مسئلہ لیجئے نامِ پاک حضور پُرنور سیّد ودعالم صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم مختلف جلسوں میں جتنے بار لے یا سنے ہر بار درود شریف پڑھنا واجب ہے اگر نہ پڑھے گا گنہگار ہوگا اور سخت وعیدوں میں گرفتار ، ہاں اس میں اختلاف ہے کہ اگرایک ہی جلسہ میں چند بار نامِ پاک لیا یا سُنا تو ہر بار واجب ہے یا ایک بار کافی اور ہر بار مستحب ہے، بہت علما قولِ اول کی طرف گئے ہیں ان کے نزدیک ایک جلسہ میں ہزار بار کلمہ شریف پڑھے تو ہر بار درود شریف بھی پڑھتا جائے اگر ایک بار بھی چھوڑ ا گنہگار ہُوا مجتبٰی ودُرمختار وغیرہما میں اس قول کو مختار واضح کہا۔

فی الدرالمختار اختلف فی وجوبھا علی السامع والذاکر کلما ذکر صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم والمختار تکرار الوجوب کلماذکر ولو ا تحد المجلس فی الاصح (درمختار فصل واذا اراد الشروع الخ مطبوعہ مجتبائی دہلی ۱/ ۷۸)

دُرمختار میں ہے کہ اس بارے میں اختلاف ہے کہ جب بھی حضور صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم کا اسم گرامی ذکر کیا جائے تو سامع اور ذاکر دونوں پر ہر بار درود و سلام عرض کرناواجب ہے یا نہیں اصح مذہب پر مختارقول یہی ہے کہ ہر بار درودوسلام واجب ہے اگر چہ مجلس ایک ہی ہو (ت)

دیگر علمانے بنظر آسانیِ امت قولِ دوم اختیار کیا ان کے نزدیک ایک جلسہ میں ایک بار درود ادائے واجب کے لئے کفایت کرے گا زیادہ کے ترک سے گنہگار نہ ہوگا مگر ثوابِ عظیم و فضلِ جسیم سے بیشک محروم رہا، کافی وقنیہ وغیرہما میں اسی قول کی تصحیح کی۔

فی ردالمحتار صححہ الزاھدی فی المجتبٰی لکن صحح فی الکافی وجوب الصلٰوۃ مرۃ فی کل مجلس کسجود التلاوۃ للحرج الا انہ یندب تکرار الصلٰوۃ فی المجلس الواحد بخلاف السجود وفی القنیۃ قیل یکفی المجلس مرۃ کسجدۃ التلاوۃ و بہ یفتی وقد جزم بھذا القول المحقق ابن الھمام فی زادالفقیر۔ (ردالمحتار فصل واذا ارادالشروع الخ مطبوعہ مصطفی البابی مصر ۱/ ۳۸۱)

ردالمحتار میں ہے کہ اسے زاہدی نے المجتبٰی میں صحیح قرار دیا ہے لیکن کافی میں ہر مجلس میں ایک ہی دفعہ درود کے وجوب کو صحیح کہا ہے جیسا کہ سجدہ تلاوت کا حکم ہے تاکہ مشکل اور تنگی لازم نہ آئے، البتہ مجلس واحد میں تکرارِ درودمستحب ومندوب ہے بخلاف سجدہ تلاوت کے ۔قنیہ میں ہے ایک مجلس میں ایک ہی دفعہ درود پڑھنا کافی ہے جیسا کہ سجدہ تلاوت کا حکم ہے اور اسی پر فتوٰی ہے۔ابن ہمام نے زادالفقیر میں اسی قول پر جزم کیاہے(ت)

بہر حال مناسب یہی ہے کہ ہر بار صلی اﷲ تعالٰی علیہ وسلم کہتا جائے کہ ایسی چیز جس کے کرنے میں بالاتفاق بڑی بڑی رحمتیں برکتیں اور نہ کرنے میں بلا شبہ بڑے فضل سے محرومی اور ایک مذہب قوی پر گناہ ومعصیت عاقل کا کام نہیں کہ اُسے ترک کرے وباﷲ التوفیق۔

[Fatawa Razaviyyah, Vol 6, Page 220]

I hope that the people will take a notice to my humble request. May ALLAH give us more strength to propagate the true message of Islam i.e. recognized by the name of Maslak-e-AlaHadrat Radi ALLAHu Taala Anho today.